گاؤں میں رہیں، سالانہ 2 لاکھ پاکستانی روپے تک حاصل کریں

میڈرڈ: ویسے تو دنیا بھر میں رہائش کے لیے اگر کسی کے پاس اپنا گھر نہیں ہوتا تو اسے کرائے پر جگہ لینی پڑتی ہے، اور بعض ممالک میں اگر حکومت بے گھر افراد کو بھی رہائش کے لیے جگہ فراہم بھی کرتی ہے توان سے بدلے میں کچھ نہ کچھ پیسے ضرور لیتی ہے، تاہم اسپین کی حکومت نے ایک گاؤں میں رہنے والے افراد کو سالانہ لاکھوں روپے دینے کا اعلان کیا ہے، جی ہاںجنوبی اطالوی خطے Puglia کے ایک قصبے کینڈیلا کے میئر نے وہاں کی کم ہوتی ہوئی آبادی سے پریشان ہوکر یہ اعلان کیا ہے، کسی زمانے میں وہاں 8 ہزار سے زائد افراد مقیم تھے مگر اب یہ تعداد 2700 رہ گئی ہے، کم آبادی والے اس گاؤں میں آبادی کو بڑھانے کے لیے انتظامیہ نے وہاں رہنے والے افراد کو لاکھوں روپے دینے کی پیش کش کی ہے۔
تفصیلات کے مطابق سر سبز پہاڑوں اور جنگل سے گھرے اس قصبے میں اگر کوئی غیرملکی بسنا چاہے گا تو انتظامیہ اپنے پلے سے تنہا فرد کو 800 یورو (99 ہزار پاکستانی روپے)، جوڑے کو 1200 یورو (1 لاکھ 48 ہزار روپے)، تین افراد کے خاندان کو 1500 یورو (1 لاکھ 86 ہزار روپے) جبکہ چار افراد کے خاندان کو دو ہزار یورو (لگ بھگ ڈھائی لاکھ روپے) دےگی، حکام کے مطابق یہ ایک پرسکون مقام ہے، جہاں لوگوں کا طرز زندگی سادہ ہے، یہاں کوئی ہجوم نہیں اور گھومنے پھرنے کے لیے متعدد مقامات ہیں۔