اہم حکومتی اتحادی جماعت نے علیحدگی کی دھمکی دیدی

فاق میں حکمران جماعت پاکستان تحریک انصاف کی اتحادی جماعت بلوچستان نیشنل پارٹی (بی این پی مینگل) نے حکومت سے علیحدگی کی دھمکی دے دی۔

بی این پی مینگل نے آواران میں 4 خواتین کی گرفتاری کے معاملے پر حکومت سے علیحدگی کی دھمکی دے دی۔قومی اسمبلی کے اجلاس میں بی این پی مینگل اور سابق فاٹا ارکان نے اسپیکر ڈائس کے سامنے دھرنا دیا۔

سردار اختر مینگل نے کہا کہ انہوں نے پہلے بھی کئی حکومتوں سے استعفیٰ دیا اب بھی حکومت سے الگ ہوسکتے ہیں۔

نجی ٹی وی کے مطابق اس موقع پر ڈپٹی اسپیکر قومی اسمبلی قاسم سوری نے خواتین کی رہائی کا حکم دیتے ہوئے وزیر داخلہ کو ایوان میں طلب کرلیا۔

ڈپٹی اسپیکر قاسم سوری کی صدارت میں قومی اسمبلی کا اجلاس شروع ہوا تو احسن اقبال نے چاراراکین کے پروڈکشن آرڈرز جاری ہونے کے باوجود اس پر عمل درآمد نہ ہونے اوررانا ثناء اللہ کے پروڈکشن آرڈرز جاری نہ ہونے کا مسئلہ اٹھایا۔

ادھراحسن اقبال نے کہا کہ پِک اینڈ چُوز نہیں چلے گا ہم اس وقت تک سیشن کا بائیکاٹ کریں گے جب تک اسپیکر کے احکامات پر عمل نہیں ہوگا۔

اس موقع پر حکومتی اتحادی بی این پی مینگل کے سربراہ سرداراختر مینگل نے نکتہ اعتراض پر کہا کہ بلوچوں کے قاتل پرویزمشرف کے مقدمات کو تالے لگائے جارہے ہیں اگر ہم اصولوں اورعزت کے لیے پچھلی حکومتوں سے الگ ہوسکتے ہیں تو اس حکومت سے بھی الگ ہوسکتے ہیں۔انہوں نے چار بلوچ خواتین کی رہائی تک اسپیکر ڈائس کے سامنے روزانہ دھرنا دینے کا اعلان بھی کیا۔

اس موقع پر ڈپٹی اسپیکر قاسم سوری نے خواتین کی رہائی کی رولنگ دیتے ہوئے کل وزیر داخلہ کو ایوان میں طلب کرلیا۔بی این پی مینگل اور سابق فاٹا اراکین کے دھرنے کے ساتھ ہی اپوزیشن نے پروڈکشن آرڈرز پر عمل درآمد نہ ہونے کے خلاف واک آؤٹ کردیا۔