ہر جمعے نئے مولوی سے نمٹنا پڑتا ہے.فوادچوہدری

وزیرسائنس اینڈ ٹیکنالوجی فواد چوہدری نے کہا ہے کہ ہمیں ہر جمعے ایک نئے مولوی سے نمٹنا پڑتا ہے، کبھی مولانا فضل الرحمن اورکبھی کوئی اورمولوی امن کو خراب کرنے نکل آتے ہیں۔

بائیو اکانومی سیمنار سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ پاکستان کا ایک طبقہ ملک کو بہت پیچھے لے جانا چاہتا ہے۔

قبل ازیں انہوں نے ایک ٹویٹ میں مولانا فضل الرحمن کے مارچ سے متعلق لکھا تھا کہ مدرسے کے بچوں کو چارے کے طورپراستعمال نہیں ہونے دیں گے۔

انہوں نے ٹویٹ کیا کہ اگرآئین اورسپریم کوٹ کے فیصلوں کے مطابق چلیں تواحتجاج پرکوئی اعتراض نہیں، یہ ہرکسی کا حق ہے۔

فواد چوہدری نے لکھا کہ حکومت مولانا کے ساتھ مذاکرات بھی کرے گی لیکن احتساب پر ڈیل نہیں کریں گے اور نہ ہی شہر بند ہوگا۔

سیمنار میں خطاب کے دوران انہوں نے کہا کہ ہمیں پائیدار ترقی کے لیے دس سے 15 سال پرامن ملک چاہیے، گزشتہ غلطیوں کی وجہ سے ہم روایتی ٹیکنالوجی پر انحصار کر رہے ہیں۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.