سلامتی کونسل اجلاس میں کشمیر کومتنازع تسلیم کیا گیا۔پاکستان

ترجمان دفتر خارجہ کا کہنا ہے کہ اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل نے مقبوضہ کشمیر کو ایک بار پھر متنازعہ تسلیم کرتے ہوئے بھارت سے کرفیو اٹھانے اورانسانی حقوق کی خلاف ورزیاں ختم کرنے پر زوردیا ۔

ہفتہ واربریفنگ دیتے ہوئے ترجمان دفترخارجہ عائشہ فاروقی نے کہا کہ مقبوضہ کشمیر میں 164 دن گزرنے کے بعد سلامتی کونسل نے دوسری مرتبہ کشمیر پربات چیت کی، بحث ایک گھنٹے سے زائد جاری رہی جس میں تمام 15 اراکین نے حصہ لیا، اراکین کی جانب سے 5 اگست کے بھارتی اقدامات کو تناو میں اضافہ کی وجہ قرار دیا گیا۔

ترجمان دفتر خارجہ کا کہنا تھا کہ بحث میں پی 5 اور دیگر ممالک نے مقبوضہ کشمیرکی صورتحال پرتحفظات کا اظہار کیا،  سلامتی کونسل اجلاس نے ثابت کیا کہ مسئلہ کشمیر اقوام متحدہ کی فہرست میں ہے، وزیر خارجہ نے سلامتی کونسل اور جنرل اسمبلی کے صدور سے بھی ملاقاتیں کیں۔

ترجمان دفتر خارجہ نے کہا کہ وزیر خارجہ نے اقوام متحدہ کے سیکریٹری جنرل انتونیو گونتریس سے بھی ملاقات کی، اقوام متحدہ کے سیکریٹری جنرل نے جنوبی ایشیا میں بات چیت اورمذاکرات کے ذریعہ امن کے فروغ کی بات کی، شاہ محمود قریشی نے واضح کیا کہ بھارت کی جانب سے مسلسل جارحانہ رویہ مس کیلکولیشن کا باعث بن سکتا ہے۔

عائشہ فاروقی کا کہنا تھا کہ اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل اجلاس میں کشمیرکو پھر متنازع تسلیم کیا گیا اور بھارت سے کرفیو اٹھانے اور انسانی حقوق کی خلاف ورزیاں ختم کرنے پر زوردیا گیا۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.